دین

BY: MUHAMMAD EHSAN, M.B.B.S., BATCH XXI
PHOTO CREDITS: KHADIJA KHAN, M.B.B.S., BATCH XX

دین کو دیندار کے کردار میں دیکھنا،
برملا جو ہوتا ،اظہار میں دیکھنا؛

بڑھ سکے جو کیوں نہ یہ؟ تم کاردار میں دیکھنا،
حسن میں دیکھنا، تم ملال میں دیکھنا؛

چھن  چکا جو بچپن یہ، اس کو ہر ہال میں دیکھنا،
ڈولا شاہ کی چوہیا ہے۔۔  تم پیار سے دیکھنا؛

کس قسم کے والدین تھے؟ آخر میں کیا کہوں،
لٹ چکا جو بچپن یہ، میں کروں تو کیا کروں؛

دیں خدا نے نعمتیں، دو دیں فقط تیرے لیے،
تو ناداں جو بن گئ، دی بیٹھی مزار پے؛

کس قسم کی داستان ہے،  کون تھا اسکا ترجمان؟
جو کر چکی اک غلطی تو، گر ماں تھی تو ایک ناتواں؛

بس کرو اب بس کرو، اس ظلم کی یہ داستان،
ستم اب ستم کہاں، گر پھٹ چکا ہے آسمان؛

تو دین کو دیندار کے کردار میں دیکھنا،
برملا جو ہوتا ،تم اظہار میں دیکھنا۔۔

 

About the author: An aspiring doctor, Ehsan is greatly inspired by Ghalib and a generation of poets from his own family. A huge Kitkat fan, he wishes to return Urdu to its former glory.

 

IMG-20161230-WA0009
PHOTO CREDITS: KHADIJA KHAN, M.B.B.S., BATCH XX

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s